Author:

11 thoughts on “Samaa Headlines – 9AM – 26 July 2019”

  • فواد چوہا دری کو جانا چاہیے چاند پر اپنے آقاووں کے ساتھ اور واپس آنے کی ضرورت نہیں وہیں رہ جانا

  • Kargil Vijai Diwas

    🇮🇳🇮🇳🇮🇳🇮🇳🛰🛰🛰🛰🇮🇳🇮🇳🇮🇳🛰🛰🛰🇮🇳🛰🇮🇳🇮🇳🛰🇮🇳🛰🇮🇳🛰🇮🇳🛰🇮🇳🛰🚩🚩🚩🇮🇳🛰🇮🇳🛰🛰🇮🇮🇳🇮🇳🇮🇳🇮🇳🇮🇳🇮🇳

  • مــیری پہچان پاکســتان says:

    ‏شہباز شریف اور ان کے خاندان نے برطانیہ کی طرف سے ملنے والی امداد کی رقم میں سے کروڑوں کی منی لانڈرنگ کی، زلزلہ زدگان اور غریب عورتوں کے علاج کے پیسے بھی نہ بخشے گئے
    شہباز شریف کے دور میں ڈی ایف آئی ڈی کے مطابق 2014 میں پاکستان کو دوسرے ممالک کی نسبت سب سے زیادہ امداد دی گئ ایک سال میں 463 ملین پاونڈز دئیے گئے
    شریف خاندان نے رقم منی لانڈرنگ میں استعال کی۔

    قانونی دستاویزات یہ بتاتے ہیں کہ شہباز کے داماد نے زلزلہ متاثرین کی بحالی کے لیے یوکے ڈی ایف آئی ڈی سے تقریبا 1 ملین پاؤنڈ وصول کیے –

    عالمی ترقیاتی منصوبوں کے لیے امداد دینے والا برطانوی محکمہ DFID نے پنجاب کے زلزلہ متاثرین کی بحالی کے لیے 500 ملین پاونڈ دئیے جو کہ برطانیہ کے شہریوں کے ٹیکس کا پیسہ تھا

    ڈی ایف آئی ڈی کے برمنگھم آفس نے پاکستان میں لاکھوں پاؤنڈز عوامی پراجیکٹ کی مد میں دئیے جو کہ شہباز شریف خاندان وصول کرتا رہا لیکن یہ فنڈز عوامی فلاح و بہبود پر خرچ نا ہوے ڈی ایف آئی ڈی کی فنڈڈ اسکیموں میں خرد برد کی انکوائری کی جا رہی ہے اس میں لاکھوں پاؤنڈز کا پراجیکٹ غریب خواتین کو غربت سے باہر نکالنے اور دیہی خاندانوں کو صحت کی فراہمی کے متعلق نقد رقم فراہم کرنے کے متعلق تھا

    خرد برد کی گئ رقم برمنگھم سے غائب ہوئی اور پھر مبینہ طور پر باراکس اور ایچ ایس بی سی سمیت برطانیہ کے بینکوں کی شاخوں کے ذریعہ شہباز کے خاندان کے اکاؤنٹس میں منتقل کر دی گئی
    یو کے میل کے مطابق اس نے پچھلے سال اس کیس کے مرکزی کرداروں کا جیل میں انٹرویو کیا جس میں یوکے شہری آفتاب محمود بھی شامل ہیں
    اس نے دعویٰ کیا کہ شریف خاندان کے لیے اس نے برمنگھم آفس سے لاکھوں پاؤنڈز کی منی لانڈرنگ کی
    یوکے میل کے مطابق وہ اس سے قبل بھی شہباز شریف کی 32 ملین پاونڈ کی لندن پراپرٹی کو سامنے لا چکا ہے

    برطانیہ کی نیشنل کرائم ایجنسی اور پاکستانی تحقیقاتی ادارے اس پر تحقیقات کر رہے ہیں ہوم سیکرٹری ساجد جاوید کے مطابق شہباز کے خاندان کے ارکان لندن میں پناہ حاصل کر سکتے ہیں
    پاکستان کے تحقیقاتی ذرائع کا کہنا ہے کہ ایک جانب عالمی ترقیاتی منصوبوں کے لیے امداد دینے والا برطانوی محکمہ DFID سابق وزیراعلیٰ پنجاب پر امدادی رقم کی بارش کرتا رہا تو دوسری جانب ان کا خاندان عوامی فنڈ کے ملین پاونڈز منی لانڈرنگ کے ذریعے برطانیہ منتقل کرتے رہے۔

    پاکستان کے تحقیقاتی ذرائع کا کہنا ہے کہ انہیں یقین ہے کہ منی لانڈرنگ کے ذریعے برطانیہ منتقل کی جانیوالی رقم میں DFID سے لی گئی امداد کا حصہ شامل ہے
    ڈیلی میل کی رپورٹ میں دعویٰ کیا گیا ہے کہ برطانیہ کی غیر ملکی امداد میں پوسٹر بوائے کے طور پر استعمال ہونے والے سابق وزیر اعلیٰ پنجاب شہباز شریف کے خاندان نے زلزلہ متاثرین کے لیے دی جانے والی امداد میں سے چوری کی
    ‏ڈی ایف آئی ڈی کے مطابق فنڈز فراہم کرتے وقت جانتے تھے کہ پاکستان میں کرپشن بہت زیادہ ہے
    ڈی ایف آئی ڈی کے 1.75 ملین منصوبے چل رہے ہیں جن کے اڈٹ کے بعد پاکستان کو منی لانڈرنگ میں ملوث شہباز شریف کے خاندان کا نام دیا گیا جس کے بعد پاکستان میں شہباز شریف خاندان کے فرنٹ مینوں پر کریک ڈاؤن ہوا
    ‏ریکوری یونٹ کےمطابق شریف خاندان کی دولت میں اچانک اضافہ دیکھنےمیں آیا
    شہباز خاندان کے 2003 میں اثاثے ڈیڑھ لاکھ پاؤنڈز اور 2018 میں 20 کروڑ پاؤنڈز کیسے ہو گئے
    کیا شریف خاندان ڈی ایف آئی ڈی کے الزامات کو بھی سیاسی کیس کہہ کر جھٹلا دے گا
    یہ جو ہم بےشعور عوام ہیں
    کرپشن کو بخشا ہمی نے ہی دوام ہے

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *